92

بے نظیر قتل کیس کے دو افسران کی سزائیں معطل۔۔لاہور ہائی کورٹ کے نئے احکامات جاری

راولپنڈی (مانیٹرنگ ڈیسک) بے نظیر بھٹو قتل کیس نے ایک اور سنسنی خیز موڑ اختیار کر لیا ہے۔ لاہور ہائی کورٹ نے کیس میں سزا یافتہ دو افسران کی اپیلوں کی سماعت کرتے ہوئے ان کی سزاؤں کو معطل کر دیا ہے۔میڈیا رپورٹ کے مطابق جسٹس طارق عباسی اور جسٹس حبیب اللہ عامر پر مشتمل لاہور ہائی کورٹ کے راولپنڈی بینچ نے سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو قتل کیس میں سزا یافتہ پولیس افسران سابق سی پی اوسعود عزیز اور سابق ایس پی خرم شہزاد کی اپیلوں پر سماعت کی، سابق پولیس افسران کا موقف تھا کہ انسداد دہشت گردی کی عدالت نے ان کی طرف سے پیش کیے گئے شواہد کو نظر انداز کیا، عدالت کی جانب سے سنائی گئی سزا غیر قانونی ہے لہذا سزاو¿ں کو کالعدم قرار دیتے ہوئے انہیں بری کیا جائے۔

عدالت نے سعود عزیز اور خرم شہزاد کی نظر ثانی کی اپیل سماعت کے لیے منظور کرتے ہوئے دونوں پولیس افسران کی سزاو¿ں کو معطل کردیا۔ عدالت نے انسداد دہشت گردی کی عدالت اور ایف آئی اے کو نوٹس جاری کرتے ہوئے ریکارڈ طلب کرلیا جب کہ کیس کی سماعت غیر معینہ مدت تک ملتوی کردی ہے۔واضح رہے کہ انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے بے نظیر قتل کیس میں سابق سی پی او سعود عزیز اور ایس پی خرم شہزاد کو 17، 17 سال قید جب کہ عدالت نے پرویز مشرف کی جائیداد ضبط کرنے کا حکم دیتے ہوئے سابق صدر کو اشتہاری قرار دیا تھا، عدالت نے کیس میں ملوث دیگر پانچوں ملزمان کو باعزت بری کر دیا تھا جن میں رفاقت، حسنین، رشید احمد، شیر زمان اور اعتزاز شاہ شامل ہیں۔

Facebook Comments

اپنا تبصرہ بھیجیں