51

احتساب کا عمل یکساں اور شفاف طریقے سے چاہتے ہیں ‘ آفتاب شیر پاؤ

پشاور (آوازچترال نیوز)۔قومی وطن پارٹی کے مرکزی چیئرمین آفتاب احمد خان شیرپاؤنے کہا ہے کہ احتساب کا عمل یکساں اور شفاف طریقے سے کیا جانا چاہیے ۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے محب بانڈہ ضلع نوشہرہ میں قومی وطن پارٹی کے رہنماء کفایت علی ایڈوکیٹ مرحوم کی یاد میں تعزیتی ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔
اس موقع پر قومی وطن پارٹی کے رہنماء سکندر حیات خان شیرپاؤ کے علاوہ دیگر مرکزی و صوبائی قائدین اور کارکن بڑی تعداد میں موجود تھے۔آفتاب شیرپاؤ نے کہا کہ مرحوم کفایت علی ایڈوکیٹ ایک نظریاتی کارکن تھے جنہوں نے تمام عمر جمہوریت کے فروغ اور سیاسی عمل کے استحکام کیلئے جدوجہد کی۔انھوں نے کہا کہ قومی وطن پارٹی ان کی گراں قدر خدمات کو کبھی فراموش نہیں کرے گی ۔ انھوں نے کہا کہ موجودہ احتسابی عمل کو سیاست سے علیٰحیدہ رکھاجائے تاکہ ملک میں سیاسی تناؤ پیدا ہونے کا خدشہ نہ ہوں۔ملک کی خارجہ پالیسی پر تبصرہ کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ وزیر خارجہ نے حال ہی میں چار ممالک کا دورہ کیا لیکن ان کے نتائج تاحال قوم کے سامنے نہیں آئے۔صوبائی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا احتساب کمیشن کے قیام پر کروڑوں روپے خرچ ہوئے جسے کارکردگی بہتر نہ ہونے کا بہانہ بنا کر ختم کردیا گیا۔
افغاستان کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے آفتاب شیرپاؤ نے کہا کہ امریکہ بھی اب اس مسئلے کے حل کیلئے سنجیدہ نظر آرہا ہے لہٰذا پاکستان کو چاہیے کہ افغانستان میں امن کے قیام کیلئے اپنا کلیدی کردار ادا کرے ۔انھوں نے حکومت کو 18ویں ترمیم میں ردوبدل کرنے کے حوالے سے خبردار کیا کہ اس اقدام سے چھوٹے صوبوں کی احساس محرومی میں مزید اضافہ ہو گا ۔انھوں نے خیبر پختونخوا کیلئے چائنا پاکستان اکنامک کوریڈور منصوبے کے تحت زیادہ سے زیادہ ترقیاتی منصوبے مختص کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔انھوں نے کہا کہ اگرچہ قبائلی علاقوں کو صوبہ میں ضم کردیا گیا ہے لیکن وہاں کے لوگ اب تک انضمام کے ثمرات سے مستفید نہیں ہو سکے لہٰذا حکومت کو چاہیے کہ قبائلی اضلاع میں جلد سے جلد ریگولر کورٹس کا قیام عمل میں لائے تاکہ وہاں کے لوگوں کو جلد اور فوری انصاف مہیا کیا جاسکے ۔

Facebook Comments