59

پاکستان پیپلز پارٹی کی پچاسویں یوم تاسیس چترال میں منائی گئی۔

Image may contain: 5 people, outdoorچترال (نمائندہ آواز) پاکستان پیپلز پارٹی کی پچاسویں یوم تاسیس چترال میں منائی گئی جس میں پارٹی کے ضلعی صدر ا ور ایم پی اے سلیم خان اوردوسرے قائدین اور کارکنان نے جمہوریت ، غریب عوام کی خدمت ، اسلام کی سربلندی اور ملکی استحکام کے لئے پارٹی کے بانی شہید ذولفقار علی بھٹو اور شہید بے نظیر بھٹو کے خدمات پر روشنی ڈالتے ہوئے کہاکہ یہ شہیدوں کی پارٹی ہے جنہوں نے اس ملک کی غریب کے لئے جان کی بازی لگادی اور انہوں نے کبھی اصولوں کی سودا بازی نہیں کی اور نہ ہی ظالم کے آگے سرجھکایا اور نہ کسی سے زندگی کی بھیک مانگی اور اسی سرزمین پر اپنا خون بہادیا۔ ارندو سے لے کر یارخون اور تورکھو تک دوردراز علاقوں سے آئے ہوئے کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے پارٹی کی گولڈن جوبلی کی مبارک باد دی اور کہاکہ شہید بھٹو کا اسٹائل اپنانے کی کوشش بہت لیڈر کرتے ہیں لیکن ان جیسے کام کرنا کسی کے بس کی بات نہیں جس نے ملک کو 1973ء کو متفقہ آئین دیا اور ملک کو دنیا کا سب سے پہلا اسلامی ایٹمی قوت بھی بنادیا۔ Image may contain: 2 people, people sitting, table and outdoorانہوں نے کہاکہ ملک دشمن قوت بے نظیر بھٹو کو شہید کرکے ملک کو غیر مستحکم کرنا چاہتے تھے لیکن آصف زرداری نے ان کی سازشوں کو ناکام بناتے ہوئے پاکستان کھپے کا نعرہ مستانہ لگاکر یہ ثابت کردیا کہ پی پی پی ہی دراصل وفاق کی علامت جماعت ہے۔ سلیم خان نے پی ٹی آئی حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ ان کی حکومت دوغلی پالیسی اور جھوٹ کی بنیاد پر قائم ہے جوکہ گزشتہ ساڑھے چار سال میں چترال کو مایوسی کے سوا کچھ نہیں دیااور گزشتہ ماہ چترال آکراپر چترال ضلعے کا اعلان کرکے عوام کو دھوکہ دینے کی کوشش کی جبکہ یہ بات ریکارڈ پر ہے کہ وزیر اعلیٰ پرویز خٹک خود کئی مرتبہ اپر چترال ضلعے کے قیام کو غیر مفید قرار دیا تھا ۔ Image may contain: 2 people, outdoorانہوں نے اس بات پر حیرانگی کا اظہار کیا کہ نئی ضلعے کی قیام کے لئے پانچ کروڑ روپے کی ضرورت ہوتی ہے لیکن اس حکومت کے پاس ایک پائی بھی اس مد میں نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی بھی صوبائی حکومت میں حصہ دار ہے اور خزانہ اور بلدیات کے اہم قلمدان رکھنے کے باوجود ضلعے کو کچھ نہ دے سکے بلکہ ضلعے کا غیر ترقیاتی فنڈ کو 33کروڑ روپے سے گھٹاکر 13کروڑ روپے کردیا ہے۔ سلیم خان نے پارٹی مخالفین کو مناظرے کا کھلا چیلنج دیتے ہوئے کہاکہ وہ آکر اپنی پارٹی حکومتوں کے ضلع چترال کے لئے انجام دئیے گئے خدمات کو ایک ایک کرکے شمار کرلیں اور ساتھ ہی پی پی پی کی خدمات کو بھی تحمل اور صبر سے سن لیں۔ اس سے قبل محمد حکیم ایڈوکیٹ، مولانا عبداللطیف، قاری نظام الدین، فخر عالم، اکمل بھٹو، شیر جوان، مولانا خلیل الرحمن، شیر عزیز بیگ،شمس الرحمن لال، پرویز لال اور دوسروں نے خطاب کیااورچترال کے لئے پارٹی کی خدمات پر روشنی ڈالی۔ اس موقع پر کئی افراد مختلف پارٹیوں کو چھوڑ کر پی پی پی میں شمولیت کا اعلان کیاImage may contain: 4 people, people smiling, people standingجن میں پاکستان مسلم لیگ سے شیرین تاج فاطمہ دنین، حاجی اقبال آف برنس اور ٹھینگ شین کے شیر عالم لال،جماعت اسلامی دروش سے محمد داؤد شامل ہیں۔ پارٹی کے دیگر لیڈر امیر اللہ خان ، سابق ایم پی اے حاجی غلام محمدبھی موجود تھے۔

Facebook Comments