تازہ ترینمضامین

دھڑکنوں کی زبان….”غریب پروری فلاحی ریاست کی شان “… جاوید حیات

ریاست کے باشندوں میں غریبوں کی زندگی گزارنے کا انحصار ریاست کے حکمرانوں کی توجہ پہ ہوتا ہے ریاست ماں ہے ۔۔ ریاست ساٸبان ہے ۔۔۔ ریاست جینے مرنے کی منزل ہے ۔۔۔ریاست شناخت ہے ۔۔۔تب کہیں ریاست کے باشندوں کو ریاست پہ فخر ہوتا ہے ۔حکومتی اقدامات میں یوٹیلیٹی سٹور کی صورت میں عوام کے لیے جو سہولت مہیا کی جاتی ہے وہ بہت ہی غریب پروری اور عوام دوستی کا مظہر ہے ۔یوٹیلیٹی سٹور میں کنٹرول ریٹ پر برانٹڈ چیزیں عوام کو مہیا کی جاتی ہیں اور ساتھ مختلف مواقع پر پیکجز دی جاتی ہیں جس سے غریبوں کو فاٸدہ ہوتا ہے حکومت ملک کے دور دراز علاقوں میں سٹور کھولتی یے اور عوام کو سہولیات مہیا کرتی ہے ۔حال ہی میں چترال کے دورافتادہ گاٶں اجنو اپر چترال میں یوٹیلیٹی سٹور کھولا گیا ۔مذکورہ گاٶں تقریبا 380 گھرانوں پر مشتمل ایک پسماندہ گاٶں ہے یہاں پر کسی چیز کی سہولت میسر نہیں یوٹیلیٹی سٹور کی سہولت دور دور علاقوں میں میسر تھی جہان تک پہنچنے کے لئے اس گاٶں کے غریب لوگوں کو ایک طرف کم از کم تین تین گھنٹے پیدل چل کےجانا پڑتا تھا ان علاقوں میں بجلی اور نیٹ ورک کی سہولت نہیں تھی اس لئےاکثر یہ لوگ خریداری سے محروم رہتے تھے ۔لیکن ابھی جب کہ یہاں پر سٹور کھولا گیا تو سارے گاٶں والے سراپا دعا گو ہیں ۔وفاقی وزیر بلدیات وفاقی سکریٹری بلدیات دعاٶں کے مستحق ہیں کہ انہوں نے ترجیحی بنیادوں پر اس سٹور کی منظوری دے کر غریب لوگوں کی دعاٸیں لے لیں ۔ضلع چترال کے ریجنل منیجر شفیق علی خان صاحب اور اس کے علمے کو خراج تحسین ہے کہ وہ اس علاقے کی جعرافیائی حالات سے واقف ہوتے ہوۓ رسک لے کر اس سٹور کے لیۓ سامان اور عملہ مہیا کیا۔یہاں پر کچی سڑکوں پر برف پڑی ہے اور گاڑیوں کا پہنچنا نہایت مشکل ہے ۔اس کے باوجود منیجر سید احمد اور وئیرہاوس انچارج تجمل خان جن کا تعلق درگٸ شہر سے ہے خود تشریف لاۓ ۔افتتاح کے دن گاٶں کے لوگ سراپا شکر گزار تھے اور ایک اسلامی فلاحی مملکت کی مثال یہاں پر دیکھنے کو مل رہی تھی ہر کسی کے لب پہ وزیر موصوف سکریٹری صاحب ایریا منیجر اور دوسرے عملے کے لیۓ دعاٸیں تھیں ۔پاکستان پہ فخر اور اپنے حکمرانوں کے لیۓ عقیدت کے آنسو ہر ایک آنکھ میں تھا سب کہہ رہے تھے کہ میڈیا کے زریعے ہماری یہ دعا اربابان اقتدار اور اختیار تک پہنچائی جاۓ ۔غریبوں کو سہولیات مہیا کرنا جہان ہر ریاست کی ذمہ داری ہے وہاں ریاست کے ذمہ داروں کی انسان دوستی کا مظہر بھی ہے اس لیۓ اس پسماندہ گاٶں میں یوٹیلیٹی سٹور کی سہولت ذمہ داری بھی ہے انسان دوستی بھی۔۔۔۔ محسوس ہوتا ہے کہ اگر کوئی خدمت کرنے پہ اڑھ جاۓ تو ناممکن کو ممکن بنا سکتا یے یہ سٹور اس کی زندہ مثال ہے ۔افتتاح کے موقع پر گاٶں کے لوگوں نےحکومت اور ذمہ داران کو خراج تحسین پیش کر نے کے ساتھ یہ گزارش بھی کی کہ اس سٹور میں گاٶں کے باشندے مسمی شفیع اللہ جس نے اس کو کامیاب بنانے کے لیۓ بے مثال قربانی دی اپنا ذاتی گھر کرایے پہ سٹور کے لیۓ دیا اور بطور ہیلپر یہاں خدمات انجام دے رہا ہے اس کو اس سٹور میں مستقل بھرتی کیا جاۓ تاکہ سٹور کو کامیاب بنانے میں مفید ثابت ہو اس لیۓ کہ سخت موسمی حالات میں کہیں دور سے غیر مقامی باشندے کو یہاں پر ڈیوٹی دینے میں مشکل ہوتا ہے ۔اس پسماندہ گاٶں کے غریب باشندوں کے جذبات دیکھ کر اچھا لگا اپنے پاکستان پہ پیار آگیا اور وہ مفروضہ حقیقت ہوتے نظر آیا کہ ”لوگوں کی لوگوں کے لیۓ لوگوں پر حکومت “ اللہ ہمارے پیارے پاکستان کو شاد و آباد رکھے۔۔

Facebook Comments

متعلقہ مواد

Back to top button