تازہ ترین

سیلاب کے  بعد  اسی جگہ تعمیرات کی اجازت دینے  والوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے…باجوہ

سوات(آوازچترال نیوز)آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا ہےکہ  2010 کے سیلاب کے  بعد  اسی جگہ تعمیرات کی اجازت دینے  والوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے۔ڈی جی آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے سوات میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کیا اور کالام، بحرین، خوازہ خیلہ اور  مٹہ  میں ریلیف آپریشن کی سرگرمیوں کا  جائزہ لیا۔آرمی چیف نےکالام سے ہیلی کاپٹرز کے ذریعے منتقل کیےگئے متاثرین سے بھی ملاقات کی۔بعد ازاں آرمی چیف نے کانجو کینٹ ہیلی پیڈ پر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ  نقصانات کی اسیسمنٹ کے لیے سروےضلعی انتظامیہ، صوبائی حکومتیں اور فوج مل کر کریں گے،اس وقت سب سے ضروری کالام روڈ کو کھولنا  امید ہے 6سے 7 دنوں میں کالام روڈ کو کھول دیں گے، کالام میں پھنسے لوگوں کو نکال رہے ہیں، کالام میں اب بحران کی صورت حال نہیں ہے۔آرمی چیف کا کہنا تھا کہ کالام میں کافی نقصان ہوا ہے، پل اور ہوٹل تباہ ہوئے ہیں، 2010 کے سیلاب میں بھی یہاں ایسی ہی تباہی ہوئی تھی، دوبارہ ان ہی جگہوں پر تعمیرات کر نے کی اجازت دے کر غفلت کا مظاہرہ کیا گیا، ذمہ داران کے خلاف قانونی کارروائی ہونی چاہیے۔جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ  سیلاب زدگان کی امداد کے لیے اپیل پر بہت اچھا رسپانس ہے، اس وقت مختلف فلاحی اداروں، سیاسی جماعتوں اور  افواج پاکستان نے اپنے ریلیف سینٹرکھولے ہوئے ہیں، این سی او سی کی طرز  پر ہیڈ کوارٹر  بنایا گیا ہے جہاں امداد کا ڈیٹا اکٹھا ہوگا، ہیڈکوارٹر سے وزیر منصوبہ بندی امداد ادھر بھجوائیں گے جہاں ضرورت ہو گی، راشن کا نہیں،خیموں کا مسئلہ ہوگا، بیرون ملک سے خیمے منگوانے کی کوشس کر رہے ہیں، فوج کی طرف سے بھی خیمے فراہم کیے جارہے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ یہاں پر اتنا مسئلہ نہیں، زیادہ مسئلہ سندھ میں ہے جہاں 4،4 فٹ پانی کھڑا ہے، سندھ اور بلوچستان میں خیموں کی زیادہ ضرورت ہے، یو اے ای، ترکی اور چین سے امدادی سامان کی پروازیں آنا شروع  ہوگئی ہیں.دوست ممالک نے پاکستان کو مصیبت  میں کبھی اکیلا  نہیں چھوڑا، انشاءاللہ آئندہ بھی نہیں چھوڑیں گے، پاکستانیوں، خصوصاً بیرون ملک پاکستانیوں کا رسپانس بہت اچھا ہے، ہمیں متاثرین کو گھر بنا کر دینے پڑیں گے۔

Facebook Comments

متعلقہ مواد

Back to top button