تازہ ترین

کرپشن میں ملوث 2341 افسران کی نیب سے پلی بارگین

اسلام آباد ( آواز چترال) نیب کے قیام سے لے کر اب تک کرپشن میں ملوث 2ہزار341 سرکاری اور نیم سرکاری اداروں کے افسران اور پرائیویٹ افراد نے پلی بارگین کے تحت لوٹے گئے پیسے واپس کئے ہیں۔ کرپشن کے سب سے زیادہ پیسے سکھر ، کراچی، لاہور اور راولپنڈی میں لوگوں سے وصول کئے گئے ہیں جبکہ سال2020ء اور سال2021ء میں خیبر پختونخوا میں ایک بھی فرد کے ساتھ پلی بارگین نہیں کی گئی ہے جبکہ2019ء میں نصف درجن سے زائد افراد نے نیب خیبر پختونخوا میں پیسے جمع کرائے ہیں۔ ذرائع کے مطابق نیب کی جانب سے پلی بارگین کی سہولت سے اب تک 2ہزار 341 افراد مستفید ہوئے ہیں جنہوں نے معمولی سے پیسے جمع کرا کر کرپشن میں جمع کی گئی باقی دولت پاک کردی ہے ۔ مذکورہ افراد کیخلاف انوسٹی گیشن شروع کی گئی تھی لیکن بعدا زاں احتساب عدالت کے ذریعے درخواست پرا ن لوگوں کے ساتھ پلی بارگین کی گئی ہے تاہم اس بارگین کے بدلے سرکاری ملازمین کی ملازمتوں کو تحفظ دیا گیا ہے اور اس الزام کے تحت اب تک ایک بھی افسر نے ملازمت سے استعفیٰ نہیں دیا ہے ۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ جتنے پیسے کلیم کئے گئے تھے وہ تمام پیسے وصول کئے گئے ہیں ان افسران میں تحصیلدار، فاٹا سیکرٹریٹ کے افسران، ایری گیشن اور سی اینڈ ڈبلیو ڈیپارٹمنٹ کے افسران اور ہائوسنگ سوسائٹیز کے مالکان شامل بتائے گئے ہیں۔

Facebook Comments

متعلقہ مواد

Back to top button