تازہ ترین

اہم عہدوں پر تعیناتیوں کے حوالے سے کوئی اختلاف نہیں

اسلام آباد ( آوازچترال )  وزیراعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ کو ڈی جی آئی ایس آئی کے نوٹیفیکیشن کے معاملے پر اعتماد میں لیا۔تفصیلات کے مطابق آج وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا۔وفاقی کابینہ کے اجلاس کی اندرونی کہانی بھی سامنے آ گئی ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق اجلاس میں سول ملٹری تعلقات سے متعلق ہونے والی قیاس آرائیوں سے متعلق بھی گفتگو کی گئی۔ اس موق پر وزیراعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ کو ڈی جی آئی ایس آئی کے نوٹیفیکیشن کے معاملے پر اعتماد میں لیا۔وزیراعظم نے مزیدکہا کہ ہم سب ایک پیج پر ہیں، معاملہ خوش اسلوبی سے جلد حل ہوگا۔وزیراعظم نے کہا کہ اہم عہدوں پر تعیناتیوں کے حوالے سے کوئی اختلاف نہیں ۔   معاملے کو غلط رنگ دینے کی کوشش نہ کریں۔وزیراعظم نے پاک فوج میں تبادلوں سے متعلق وفاقی کابینہ کو اعتماد میں لیا۔ خیال رہے کہ چھ اکتوبر کو پاک فوج میں ہونے والی تقرریاں اور تبادلوں کے بعد لیفٹیننٹ جنرل ندیم احمد انجم کو ڈی جی آئی ایس آئی بنانے کا اعلان کیا گیا تھا لیکن ان کی تقرری کا نوٹی فکیشن جاری نہ ہونے کی وجہ سے ایک تاثر پیدا ہو گیا کہ غالباً وزیراعظم عمران خان لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید کو ہی ڈی جی آئی ایس آئی کے عہدے پر برقرار رکھنا چاہتے ہیں اور اسی لیے تاحال لیفٹیننٹ جنرل ندیم احمد انجم کی تقرری کا نوٹی فکیشن تاحال جاری نہیں کیا گیا۔ تاہم اب ذرائع نے لیفٹیننٹ جنرل ندیم احمد انجم کے ہی ڈی جی آئی ایس آئی ہونے کی تصدیق کر دی ہے۔ یاد رہے کہ 6 اکتوبر کو پاک فوج میں اعلیٰ سطح پر تبادلوں اور تقرریاں کی گئی تھیں۔ ڈی جی آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید کو کور کمانڈر پشاور تعینات کر دیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ لیفٹیننٹ جنرل محمد عامر کو کور کمانڈر گوجرانوالہ تعینات کیا گیا۔ آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری بیان کے مطابق لیفٹیننٹ جنرل عاصم منیر کو کوارٹر ماسٹر جنرل تعینات کر دیا گیا۔ خیال رہے کہ قبل ازیں لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید ڈی جی آئی ایس آئی کے عہدے پر تعینات تھے۔

Facebook Comments

متعلقہ مواد

Back to top button