151

اپر چترال کو الگ ضلع کا درجہ ملا ہے…مستقبل قریب میں اپر چترال میں جلانے کے لکڑی کا بہت بڑا بحران پیدا ہونے کا خدشہ ہے ۔

اپر چترال(  کریم اللہ سے)آج سے ٹھیک دو برس قبل حکومت خیبر پختونخواہ نے ضلع اپر چترال کو الگ ضلع کا درجہ دے کر اس کا باضابطہ نوٹیفکیشن جاری کردیا ،مگر ضلع اپر چترال کو پراپر فنکشنل بنانے کے حوالے سے ابھی تک کوئی خاطر خواہ کام نہ ہوسکا۔ دیکھا جائے تو اپر چترال میں جنگلات کی انتہائی قلت ہے جس کے باعث یہاں جلانے کی لکڑی لوئر چترال کے جنگلات سے لائی جاتی ہے ، چترال میں جلانے کی لکڑی کا کم و بیش ساٹھ سے ستر فیصد اپر چترال میں استعمال ہورہا ہے ، یعنی اپر چترال میں اکثریت ایندھن کے حوالے سے لوئر چترال پر انحصار کرنے پر مجبور ہے۔ اب چونکہ اپر چترال کو الگ ضلع کا درجہ ملا ہے تو مستقبل قریب میں اپر چترال میں جلانے کے لکڑی کا بہت بڑا بحران پیدا ہونے کا خدشہ ہے ۔ سال روان ہی میں لوئر چترال سے اپر چترال جلانے کی لکڑی لانے کے لئے پرمٹ کے اجراء کی خبرین محو گردش رہی مگر بعد میں کہا گیا کہ اس فیصلے کو واپس لیا گیا ۔ حقیقت یوں ہے کہ ایک ضلع سے دوسری ضلع لکڑی لے جانے پر پابندی عائد ہے یہی قانون چترال کے دونوں اضلاع پر بھی نافذ ہوگی ۔ اور اگلے دو سے تین برس کے دوران لوئر چترال سے اپر چترال لکڑی لانے پر پابندی عائد ہوگی یا پھر پرمٹ کا نفاذ ہوگا ایسی صورت میں اپر چترال میں جلانے کے لکڑی کا بہت بڑا بحران پیدا ہونے کا خدشہ ہے، جس کا فی الحال کسی کو بھی احساس نہیں ۔

Facebook Comments