149

توقعات سے زیادہ میری حوصلہ افزائی پر میں میڈیا کے ساتھ تمام چترالی عوام کا شکر گذار ہوں۔پرویز لال

چترال (نمائندہ آوازچترال)پ 8 ستمبر کو ڈپٹی کمشنر اپر چترال کے دفتر سے ایک مراسلے کے زریعے مجھ پر بے بنیاد الزام لگا کر تھری ایم پی او کے ذریعے 30 دن کیلئے ڈیرہ اسماعیل خان جیل بھیجنے کے احکامات جاری ہوئے تھے جس کو میں نے پشاور ہائی کورٹ برانچ (دارالقضا) سوات میں چترال کے معروف قانون دان رحیم اللہ چترالی کی مدعیت میں چیلنج کیا تھا۔ اللہ تعالیٰ کے فضل و کرم اور آپ سب دوستوں، عزیزوں اور رشتہ داروں کی پر خلوص دعاؤں اور مکمل سپورٹ کی بدولت دارالقضا سوات کے جسٹس اشتیاق احمد اور جسٹس وقار احمد پر مشتمل بنچ نے منگل کے روز سماعت کے دوران ڈی۔سی اپر چترال کا حکم معطل کیا ایڈوکیٹ جنرل کو 29 ستمبر کو اپنے مکمل جواب جمع کرنے کا حکم دیا۔ انشاء اللہ 29 ستمبر کو کیس کا تفصیلی فیصلہ ہوگا۔ میں سوشل میڈیا کی وساطت سے اپنے تمام دوست احباب کا دلی شکریہ ادا کرتا ہوں کہ آپ لوگوں نے سوشل، پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا میں میری حمایت میں آواز اٹھائی اور توقعات سے بڑھ کر میری حوصلہ افزائی کی۔ میں ایک مرتبہ پھر آپ سب کا شکریہ ادا کرتا ہوں اور امید کرتا ہوں کہ آئندہ بھی اسی طرح میری حوصلہ افزائی کرتے رہیں گے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین

Facebook Comments