37

جمعیت کے 125نہیں بلکہ 164اراکین یعنی ایک تہائی اراکین کے اصل دستخطوں اور شناختی نمبروں سے عدم اعتماد کی تحریک کے لئے اجلاس تحریر پیش کی جا سکتی ہے

چترال(نمائندہ  آواز چترال  ) قاری جمال عبدالناصر سینئر نائب امیر جمعیت علماء اسلام چترال لوئر نے ایک اخباری بیان میں کہا ہے کہ اخبارات والے حضرات گمنام اور منگھڑت بیانات شائع کرکے خود کو متنازعہ بنانے کی کوشش نہ کرئے وہ بیان جس میں کسی فرد یا افراد کا نام تک درج نہ ہو بیان کی اصلیت مشکوک کرنے کے لئے کافی ہی نہیں بلکہ بعض صحافی برادری پرائے کاموں میں ٹانگ اڑانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ایسے افراد کانام شائع کرنے کا حق محفوظ رکھتے ہیں اُنہوں نے کہا کہ جہاں تک بات جمعیت کے اندرونی سیاسی معاملات کا تعلق ہے وہ سیاسی معاملہ ہے اس سے انکاری بے معنی ہے جمعیت کے 125نہیں بلکہ 164اراکین یعنی ایک تہائی اراکین کے اصل دستخطوں اور شناختی نمبروں سے عدم اعتماد کی تحریک کے لئے ضلعی امیر کو بغرض طلبی اجلاس تحریر پیش کی جا سکتی ہے ضلعی امیر کی عدم دلچسپی کی صورت میں صوبائی جمعیت کو تحریر ارسال کی جا سکتی ہے صوبائی جمعیت کی طرف سے اجلاس کی اجازت ملنے پر اجلاس بلائی جا سکتی ہے اور کل ممبران کی دو تہائی اکثریت یعنی 328ارکین کی اکثریت تحریک کے حق میں ثابت کرنا لازمی ہے اگر صوبائی جمعیت اجلاس بلانے کی اجازت نہ دے تو اس صورت میں مرکز سے اجازت لینے کی ضرورت ہوگی ایسے کسی بھی آئینی تحریک کی ہر کار کن کو اجازت ہے اس سے انکاری ممکن نہیں لیکن ایک فرد بھی اپنی دستخط جب ثبت کرنے کے لئے تیار نہیں صحافی برادری فرضی قیاس آرائیوں سے گریز کریں۔

Facebook Comments