136

عدلیہ کے گریڈ17سے بالاافسروں کا سپیشل ایڈہاک الاؤنس منظور

پشاور۔(آوازچترال رپورٹ)پشاورہائی کورٹ کے جسٹس اکرام اللہ اور جسٹس نعیم انورپرمشتمل دورکنی بنچ نے عدالت عالیہ کے گریڈ17سے اوپرکے افسروں کو5فیصد سپیشل ایڈہاک الاؤنس نہ دینے کے خلاف دائررٹ منظورکرتے ہوئے صوبائی حکومت کوہدایت کی ہے کہ عدالت عالیہ پشاورکے گریڈ17سے اوپرکے افسروں کوبھی پانچ فیصدایڈہاک الاؤنس دیاجائے دورکنی بنچ نے کیس کی سماعت شروع کی تودرخواست گذاروں کے وکیل آصف یوسفزئی نے عدالت کو بتایاکہ صوبائی حکومت نے مختلف سکیل کے افسروں کے لئے ایڈہاک الاؤنس کی منظوری دی ہے۔ جوگریڈ16تک دس فیصد اورگریڈ17سے بالاافسروں کے لئے پانچ فیصد ہے جوان کی بنیادی تنخواہ پراداکیاجاتاہے انہوں نے عدالت کو بتایاکہ ان میں صرف ان ملازمین کویہ الاؤنس نہیں دیاجارہا ہے جو یاتوپروفیشنل یاجوڈیشل الاؤنس لے رہے ہیں انہوں نے عدالت کو مزیدبتایاکہ یہ غیرقانونی اورغیرآئینی اقدام ہے کیونکہ تمام گریڈ16 سرکاری ملازمین یوٹیلیٹی الاؤنس بھی لے رہے ہیں اوریہ ایڈہاک الاؤنس بھی لے رہے ہیں۔ انہوں نے بتایاکہ پی ایم ایس کے انتظامی افسر بھی یہ الاؤنس حاصل کررہے ہیں مگرعدلیہ کے ملازمین کو اس الاؤنس سے محروم رکھاجارہا ہے عدالت عالیہ نے دوطرفہ دلائل مکمل ہونے پر عدالت عالیہ پشاورکے گریڈ17سے بالاافسروں کو پانچ فیصدایڈہاک الاؤنس ادا کرنے کے احکامات جاری کردئیے

Facebook Comments