111

داد بیداد….مطالعے کامشغلہ…….. ڈاکٹر عنا یت اللہ فیضی

بےس برس قبل تک کتاب زندگی کا ایک نہایت اہم جزو ہوا کرتی تھی‘کسی سکول کے طالب علموں کو ستونوں سے ٹیک لگائے ایک ہاتھ میں ہیری پوٹر کی کتاب اور دوسرے ہاتھ میں لنچ دیکھا جاتا تھا۔ گھر پر بڑی عمر کے افراد شام کو ناولوں یا رسالوں میں غرق ہوتے یا رات کے کھانے کے بعد باآواز بلند غالب یا اقبال کے اشعار پڑھتے‘امریکہ کے پیو ریسرچ سنٹر کے مطابق 1978ءسے لےکر اب تک مطالعے کا یہ رجحان کم ہوتا دیکھا گیا ہے حتیٰ کہ سکولوں کے وہ طلبہ جنہیں پہلی جماعت میں مطالعہ کی بنیادی تعلیم دی جاتی ہے‘ وہ بھی چوتھی کلاس سے پہلے ٹھیک طرح سے تحریر کو پڑھ نہیں پاتے۔ افسوس کےساتھ مطالعے کی کمی دماغی خلیوں پر بدترین اثرات‘ ہم گدازی‘ خود اعتمادی اور جذباتی ذہانت میں کمی کا باعث بنتی ہے جبکہ والدین اور بچوں کا خیال رکھنے والے دیگر افراد اس بات سے بے خبر ہوتے ہیں‘مطالعے کے عمل میں ضروری نہیں صرف اور صرف کتابیں ہی شامل ہوں لیکن کم از کم اخبار یا کالم پڑھنے کےلئے طالب علموں کی حوصلہ افزائی کی جائے چونکہ ان کے پاس زیادہ وقت نہیں ہوتا اسلئے اتنا مطالعہ بھی ان کےلئے کافی ہوگا۔ بہتر انداز میں اور مستقل مزاجی کےساتھ مطالعہ موجودہ اور ماضی کے حالات سے واقف رکھتا ہے‘ساتھ ہی ثقافتی آگاہی میں اضافہ اور خود اظہاری کو بہتر بنانے میں مدد کرتا ہے۔ وہ طالب علم جن کے ذہن پر صرف کورس ورک ہی سوار رہتا ہے وہ بھی تحریر میں اور مناسب لفظوں کی صورت میں اپنے خیالات کا اظہار نہیں کرپاتے‘ چند میں تو خود اعتمادی کی بھی کمی ہوتی ہے‘ یہ قابل فہم بات بھی ہے کیونکہ وہ مختلف خیالات و عزائم اور لفظوں کے ذخیرے تک رسائی سے عاری ہوتے ہیں‘ وہ یہ نہیں سمجھتے کہ مطالعہ ہی سکھاتا ہے کہ کس طرح چلنا ہے‘ کس طرح دوڑنا ہے اور کس طرح اڑنا ہے‘ بدقسمتی سے مطالعے میں کمی کی وجہ سوچنے کے طریقوں میں تبدیلی اور سمارٹ فونز اور سوشل میڈیا کا ابھار ہے اور اس کمی نے بچوں اور بالغوں دونوں کو ہی بڑا نقصان پہنچایا ہے‘آج کے اس مسابقتی ماحول میں والدین اپنے بچوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہیںبلکہ یوں کہئے کہ وہ مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اپنے ٹیسٹ اور امتحانوں میں زیادہ سے زیادہ نمبر اٹھائیں۔ توجہ بچے کے گریڈ پر تو دی جاتی ہے لیکن اس کے حاصل کردہ علم پر زیادہ دھیان نہیں دیا جاتا۔ لہٰذا اضافی مطالعہ جو بچے کو اس کے سکول ورک سے بھٹکا سکتا ہے اسلئے اسے غیر ضروری اور بے فائدہ تصور کرلیا جاتا ہے‘جب طلبہ کو مطالعے کےلئے کتابوں کی فہرست تھمائی جاتی ہے تو انکی آنکھیں پھٹی کی پھٹی رہ جاتی ہیں اوران میں چند سوال کرتے ہیں کہ لیکن اِن غیرنصابی کتابوں کا مطالعہ ہمیں بہتر گریڈ لانے میں کس طرح مددگار ثابت ہوگا؟ جس کا جواب یہ ہے کہ پڑھو اور پھر دیکھو‘اور پھر ہر گزرتے ماہ کےساتھ انکے کام بلکہ ان کی شخصیت میں بھی مطالعے کا اثر نظر آنے لگتا ہے۔

Facebook Comments