91

پشاور ہائیکورٹ: جسٹس وقارسیٹھ کیخلاف بیان بازی پرتوہین عدالت کی درخواست دائر

پشاور( آوازچترال نیوز) پشاور ہائیکورٹ میں جسٹس وقار احمد سیٹھ کے فیصلے پر بیانات دینے والوں کیخلاف توہین عدالت کی درخواست دائر کردی گئی، درخواست ملک اجمل خان ایڈوکیٹ نے دائرکی، درخواست میں پرویزمشرف، وزیراعظم، وفاقی وزیرقانون، آرمی چیف، ڈی جی آئی ایس پی آر اور فردوس عاشق اعوان کوبھی فریق بنایا گیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق ملک اجمل خان ایڈوکیٹ نے پشاورہائیکورٹ میں توہین عدالت کی کارروائی کیلئے درخواست دائر کی ہے کہ متعقلہ افراد کیخلاف کاروائی کی جائے۔درخواستگزار نے مئوقف اختیار کیا ہے کہ سابق صدر پرویز مشرف کیخلاف سنگین غداری کیس میں جسٹس سیٹھ وقار کے فیصلہ دینے پر ان کیخلاف ہتک آمیز بیانات دیے گئے۔ جسٹس وقاراحمد سیٹھ کے خلاف استعمال کی گئی زبان نہ مناسب تھی۔ درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی ہے کہ عدالت فریقین کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کرے۔ درخواست میں وفاق، سابق صدر پرویزمشرف، وزیراعظم، آرمی چیف، ڈی جی آئی ایس پی آر، فردوس عاشق اعوان اور وفاقی وزیرقانون کوبھی فریق بنایا گیا ہے۔ دوسری جانب سپریم کورٹ آف پاکستان میں سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کی سزا اور لاش کو گھسیٹ کر ڈی چوک لانے کیخلاف درخواست دائر کر دی گئی ۔ جمعرات کو درخواست سماجی کارکن اقبال کاظمی نے دائر کی۔ درخواست میں استدعا کی گئی کہ خصوصی عدالت کی تشکیل کو قانون سے متصادم قرار دیا جائے،خصوصی عدالت کے دائرہ اختیار کا آئین و قانون کے تحت جائزہ لیا جائے، درخواست میں کہا گیا کہ خصوصی عدالت کے فیصلے سے ملک میں انتشار اور بحران کی کیفیت پیدا ہوگئی ہے۔درخواست میں کہا گیا کہ خصوصی عدالت کے پاس آرٹیکل 6 کیخلاف کاروائی کا اختیار نہیں،انسانی لاش کو چوراہے پر گھسیٹنا توہین میت ہے۔ درخواست میں کہا گیا کہ فیصلے سے عدلیہ کا وقار مجروح ہوا، فیصلے سے اداروں میں ٹکراو کا تاثر پھیل رہا ہے۔ درخواست میں کہا گیا کہ عوام عدم تحفظ کا شکار ہیں، درخواست میں وفاق، وزارت قانون اور وزارت داخلہ کو فریق بنایا گیا ہے۔

Facebook Comments