45

پشاور ہائی کورٹ کی طرف سے چیئرمین پی آئی اے کے خلاف دائر کردہ درخواست کی سماعت

چترال( نمائندہ آوازچترال )پشاور ہائی کورٹ میں بدھ کے روز سنیئر رہنما پاکستان تحریک انصاف امین الحسن کی طرف سے چیئرمین پی آئی اے کے خلاف دائر کردہ درخواست کی سماعت ر جسٹس محترمہ مسرت ہلالی اورجسٹس احمد علی خان کی عدالت میں ہوئی۔محترمہ جسٹس مسرت ہلالی نے پی آئی اے کی طرف عدالت میں پیش نہ ہونے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے پی آئی اے کے ہیومین ریسورس منیجر کے خلاف کو وارنٹ جاری کرتے ہوئے 15جنوری کو عدالت کے سامنے پیش کرنے کا حکم دیا۔اُنہوں نے پی آئی اے کی طرف سے ائیرپورٹ میں 13000روپے ٹکٹ فروخت کا بھی نوٹس لیا۔اور چترال کے پروازیں ریگولر کرنے کا بھی حکم دیا۔اُنہوں نے ایڈوکیٹ جنرل کے پی کے کو اس کیس کو دیکھنے اور 15جنوری سے پہلے عدالت میں رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا۔ یاد رہے کہ پی ٹی آئی رہنماامین الحسن کی طرف سے 2014 میں دائرپی آئی اے چیئرمین کے خلاف درخواست میں موقف اختیار کیا گیاہے کہ پی آئی اے کی طرف سے اسلام آباد سے چترال، چترال سے اسلام آباد،پشاور سے چترال اور چترال سے پشاور کے لیے کرایوں میں بے پناہ اضافہ کیا گیا ہے جسے کم کرکے 4000روپیہ فکس کیا جائے۔جس پر پی آئی اے کی طرف سے عدالت ہذا کو بتایا گیاتھا کہ پی آئی اے کی طرف صرف 2100روپیہ وصول کیا جارہا ہے جبکہ باقی رقم ٹیکس کی مد میں وصول کی جارہی ہے۔جسے مزید کم کرنے سے پی آئی اے سے کی طرف معذرت کا اظہار کیا گیا تھا۔عدالت ہذا نے ایف بی آر سے 13 مارچ کو پیشی کے موقع پر رپورٹ طلب کیاتھا۔مگر ابھی تک نہ پی آئی اے کی طرف سے اور نہ ایف بی آر کی طرف سے عدالت میں کوئی پیش ہوا۔جس پر ہائی کورٹ نے پی آئی اے کے ہومین ریسورس کے منیجر کے خلاف کو ورانٹ جاری کرتے ہوئے15جنوری کو عدالت کے سامنے پیش کرنے کا حکم دیا۔امین الحسن کی طرف سے ملک محمد اجمل خان ایڈوکیٹ نے کیس کی پیروی کی۔