پیپلز پارٹی کے سینیٹر، سابق چئیرمین سینیٹ رضا ربانی مستقل طور پر مستعفی ہوگئے | Awaz-e-Chitral

Home / تازہ ترین / پیپلز پارٹی کے سینیٹر، سابق چئیرمین سینیٹ رضا ربانی مستقل طور پر مستعفی ہوگئے

پیپلز پارٹی کے سینیٹر، سابق چئیرمین سینیٹ رضا ربانی مستقل طور پر مستعفی ہوگئے

اسلام آباد( آوازچترال نیوز ) پیپلز پارٹی کے سینیٹر، سابقچئیرمین سینیٹ رضا ربانی مستقل طور پر مستعفی ہوگئے، گزشتہ روز چئیرمین سینیٹ کیخلاف تحریک عدم اعتماد ناکام ہونے کے بعد دلبرداشتہ ہو کر مستعفی ہونے والے رضا ربانی نے اپنا استعفیٰ واپس نہ لینے کا اعلان کردیا۔ تفصیلات کے مطابق پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما اور سینیٹر رضا ربانی نے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔رضا ربانی نے گزشتہ روز صادق سنجرانی کیخلاف تحریک عدم اعتماد ناکام ہونے کے بعد دلبرداشتہ ہو کر دیگر پی پی سینیٹرز کے ہمراہ اپنے استعفے پارٹی چئیرمین بلاول بھٹو کو بھجوا دیے تھے۔ اب میڈیا رپورٹس کے مطابق رضا ربانی نے بلاول بھٹو کو واضح کر دیا ہے کہ وہ اپنا استعفیٰ واپس نہیں لیں گے۔   واضح رہے کہ رضا ربانی گزشتہ دور حکومت میں سینیٹ کے چئیرمین تھے۔ دوسری جانب چئیرمین سینیٹ صادق سنجرانی کیخلاف سینیٹ میں اپ سیٹ شکست کے بعد سوالات اٹھنے لگے ہیں کہ اپوزیشن کی کس جماعت کے سینیٹرز نے اپنے ووٹ فروخت کیے۔ اس بحث کے آغاز کے بعد الزامات سے بچنے کیلئے پیپلز پارٹی کے تمام سینیٹر نے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا۔ پیپلز پارٹی کے تمام سینیٹرز نے گزشتہ روز اپنے استعفے پارٹی چئیرمین بلاول بھٹو زرداری کو بھجوا دیے تھے۔پیپلز پارٹی کے کل 21 سینیٹرز نے اپنے استعفے پارٹی چئیرمین کو بھجوائے۔ واضح رہے کہ گزشتہ روز چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کو تبدیل کرنے کی اپوزیشن اور ڈپٹی چیئرمین سلیم مانڈوی والا کی تبدیلی کی حکومتی کوششیں ناکام ہوگئی تھیں جس کے بعد صادق سنجرانی چیئر مین اور سلیم مانڈوی والا ڈپٹی چیئر مین سینیٹ کے عہدے پر برقرار ہیں۔ چیئرمین سینٹ کے خلاف قرارداد پر ووٹنگ کے دور ان میر حاصل بزنجو نے 50اور صادق سنجرانی نے 45ووٹ حاصل کئے ، پانچووٹ مسترد ہوگئے ، جماعت اسلامی نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا ، چوہدری تنویر بیرون ملک ہونے کی وجہ سے ووٹ کاسٹ نہ کر سکے ، اسحاق ڈار نے حلف ہی نہیں اٹھایا ،چیئرمین سینیٹ کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی ناکامی کے بعد حکومتی اراکین نے ڈیسک بجا کر ایک دوسرے کو مبارکباد دی اور حکومتی اراکین کی جانب سے ایک سنجرانی سب پر بھاری کے نعرے لگائے گئے۔جمعرات کو سینیٹ کی تاریخ میں پہلی بار چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کو عہدے سے ہٹانے کی قرارداد پر رائے شماری ہوئی،ووٹنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد حکومت اور اپوزیشن کے پولنگ ایجنٹس کے سامنے ووٹوں کی گنتی کی گئی۔پریزائیڈنگ افسر بیرسٹر سیف نے ووٹوں کی گنتی کے بعد اعلان کیا کہ آئین کے مطابق قرارداد کے حق میں 50 ووٹ پڑے جس کی وجہ سے یہ قرارداد متعلقہ ایک چوتھائی ووٹ نہ ملنے کی وجہ سے مسترد کی جاتی ہے۔

error: Content is protected !!