33

ڈومیسائل کی بنیاد پر کلاس فور ملازمین کا اپر چترال تبادلے کا مطالبہ بدنیتی اورتعصب پر مبنی اور نوزائیدہ ضلعے کی مشکلات میں اضافے کی کوشش ہے۔.پرویز لال

بونی ( نمائندہ آوازچترال)آل ناظمین فورم لوئرچترال کے ڈومیسائل کی بنیاد پر کلاس فور ملازمین کے تبادلے کے حوالے سے اخباری بیان کے رد عمل میں ایک ہنگامی اجلاس کے بعد صدرپرویز لال بونی نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ آل ناظمین فورم لوئرچترال کی جانب سے ڈومیسائل کی بنیاد پر کلاس فور ملازمین کا اپر چترال تبادلے کا مطالبہ بدنیتی اورتعصب پر مبنی اور نوزائیدہ ضلعے کی مشکلات میں اضافے کی کوشش ہے۔اس طرح کےغیر زمہ دارانہ اقدامات اوربیانات سے چترال کےآپس کے برادرانہ ماحول کو نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے۔ چاہیے تو یہ تھا کہ لوئر چترال کے زمہ دارافراداپر چترال والوں کے ساتھ ملکر ابتدائی سیٹ اپ میں انکی مدد کرتے اوراپرچترال کو بھی جلد ایک مثالی ضلع بناتے، لیکن آل ناظمین فورم لوئرچترال نےڈومیسائل کی بنیاد پرکلاس فورملازمین کی تبادلےکا مطالبہ کر دیا جو کہ انتہائی افسوسناک ہے۔ اگر ڈومیسائل کی بنیاد پرتبادلہ ہونا ہے تو صرف کلاس فور ملازمین کیوں؟سارے گیزٹڈ آفیسرز، ڈاکٹرز وغیرہ بھی اپر چترال ٹرانسفر کیے جائیں اور لوئر چترال سے بھی جتنے ملازمین صوبے کے دوسرے ضلعوں میں تعینات ہیں ان کا بھی فوری طور پرآبائی ضلعوں میں تبادلہ کیا جائے تاکہ ان کیلئے بھی آسانی ہواور پورے صوبے میں ایک جیسا نظام ہو۔ اُنہوں نے کہا کہ لوئر چترال کے محترم ناظمین صرف نوزائیدہ اپر چترال کے لیے ہی یہ قانون کیوں چاہتے ہیں؟ اسٹاف سے پہلے اثاثوں کی تقسیم کاعمل پوراہونا چاہیے۔ نوٹیفیکیشن کے مطابق تمام ضلعی اداروں کے اثاثہ جات بشمول فرنیچر وغیرہ دونوں ضلعوں میں برابر تقسیم ہونے ہیں۔ پہلے اثاثے تقسیم ہوجائیں اوردفترات وغیرہ کا سیٹ اپ مکمل ہوجائے تو پھراسٹاف کے تبادلے ہوں بصورت دیگرنوزائیدہ ضلعے کی مشکلات میں اضافہ ہو جائے گا۔ اُنہوں نے امید کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ لوئر چترال کے ہمارے بھائی اپنا غیر زمہ دارانہ مطالبہ واپس لیکر نئے ضلعے کے سیٹ اپ میں ہمیشہ کی طرح ہمارے شانہ بشانہ کام کریں گے۔