تازہ ترین

حکومت نے سابقہ حکومتوں کے مقابلے میں اوسطاً دگنا قرضہ لیا، اسٹیٹ بینک

 کراچی( آوازچترال نیوز)اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے مطابق حکومت نے سابقہ حکومتوں کے مقابلے میں اوسطاًدگنا قرضہ لیا، ہر سال قرضوں میں اوسطاً 2ہزار319ارب روپے ،رواں مالی سال کے9ماہ میں ہی 5ہزار 215 ارب روپے کا اضافہ ہوا جبکہ دوسری جانب9ماہ کے دوران بنگلہ دیش کو برآمدات سےپاکستان کو 570ملین ڈالر زکا زرمبادلہ حاصل ہوا۔ اسٹیٹ بینک کے مطابق مالی سال 2009 سے لیکر مالی سال 2018 کے اختتام تک 10سال میں پاکستان کے مجموعی قرضوں اور واجبات میں 23ہزار 188ارب روپے کا اضافہ ہوا، جو اس دوران 6ہزار691ارب روپے سے بڑھ کر 29ہزار 879ارب روپے تک پہنچ گئے، اس کے مطابق دس سال میں ہر سال قرضوں میں اوسطاً 2 ہزار319 ارب روپے کا اضافہ ہواجبکہ رواں مالی سال جولائی سے مارچ تک نو ماہ میں ہی ملکی قرضوں کا مجموعی حجم 35 ہزار 95 ارب روپے تک پہنچ گیا۔اس طرح صرف نو ماہ میں ہی ملکی قرضوں کے بوجھ میں 5 ہزار 215 ارب روپے کا اضافہ ہوا، اگر سابقہ حکومتوں کے اوسطا نو ماہ کے قرضوں سے موازنہ کیا جائے تو پی ٹی آئی نے نو ماہ میں سابقہ حکومتوں کے اوسط   قرضے سے تقریبا 200 فیصد زیادہ قرض لیا کیا گیا، ان میں سے پیپلز پارٹی کے پانچ سال میں حکومتی قرضوں میں 8 ہزار 76 ارب روپے اورن لیگ کے 5 سال میں 10 ہزار 661 ارب روپے کا اضافہ ہوا جبکہ پی ٹی آئی کے پہلے نو ماہ کے دوران حکومتی قرضوں میں 3 ہزار 655 ارب روپے کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔دوسری جانب اسٹیٹ بنک آف پاکستان کے اعدادوشمارکے مطابق موجودہ مالی سال کے ابتدائی 3 سہ ماہیوں میں بنگلہ دیش کو برآمدات سے ملک کو 570.043 ملین ڈالر کا زرمبادلہ حاصل ہوا جو گزشتہ مالی سال کے اسی عرصہ کے مقابلے میں 11.92 فیصد زیادہ ہے۔ گزشتہ مالی سال کے اسی عرصہ میں بنگلہ دیش کو پاکستانی برآمدات سے ملک کو 509.323 ملین ڈالرز کازرمبادلہ حاصل ہواتھا۔اعداد وشمارکے مطابق مارچ کے مہینے میں بنگلہ دیش کو ملکی برآمدات کے نتیجے میں 60.63 ملین ڈالر کازرمبادلہ حاصل ہوا۔گزشتہ سال مارچ میں بنگلہ دیش کو پاکستانی برآمدات سے ملک کو 62.713 ملین روپے کازرمبادلہ حاصل ہواتھا۔اعدادوشمارکے مطابق مذکورہ عرصہ میں بنگلہ دیش سے درآمدات پرپاکستان نے 52.47 ملین ڈالر کازرمبادلہ صرف کیا، گزشتہ مالی سال کے اس عرصہ میں بنگلہ دیش سے درآمدات پر پاکستان نے 52.68 ملین ڈالر کازرمبادلہ صرف کیا تھا۔

Facebook Comments

متعلقہ مواد

Back to top button