تازہ ترین

چترال میں خودکشی کے بار بار رونما ہونے والے واقعات بارے یونیورسٹی آف چترال میں مذاکرہ

چترال ( آوازچترال رپورٹ) چترال میں خودکشی کے بار بار رونما ہونے والے واقعات کے بارے میں یونیورسٹی آف چترال میں ایک مذاکرہ منعقد ہوا جس میں ڈسٹرکٹ پولیس افیسر محمد فرقان بلال، پراجیکٹ ڈائرکٹر چترال یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر بادشاہ منیر بخاری، پرووسٹ ڈاکٹر تاج الدین نے مختلف وجوہات پر روشنی ڈالی اور Image may contain: 3 people, people on stage and indoorنوجوانوں میں خود کشی کے سلسلے کی روک تھام کے لئے ممکنہ حل بھی تجویز کئے۔ اس موقع پر اپنے خطاب میں فرقان بلال نے کہاکہ خود اعتمادی کا فقدان، گھریلو جھگڑے ، ڈپریشن کی بیماری کا عام ہونا اور دوسرے وجوہات شامل ہیں جن کو دور کرنے میں والدین ہی کلیدی کردار ادا کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ امتحانات میں گریڈ اور Image may contain: 3 people, people standingنمبروں پر زور دینے کی بجائے والدین کو اپنے بچوں کی کردار سازی پر توجہ مرکوز کرنی چاہئے ۔ پروفیسر ڈاکٹر بادشاہ منیر بخاری نے کہاکہ چترال میں نوجوان تیزی سے بدلتی ہوئی دنیا کے رفتار سے چلنے اور جدید تقاضوں سے مکمل اہم آہنگ نہیں ہے جوکہ ذہنی تناؤ کا باعث بنتی ہے اور معاشرے سے تنہا پسندی اپنانا اس کی اولین Image may contain: 3 peopleعلامات میں سے ہے ۔ انہوں نے کہاکہ آزادی عمل کے غلط استعمال سے بھی پیچیدگیاں پیدا ہوتی ہیں جوکہ خودکشی پر منتج ہوتی ہیں۔ اس موقع پر پروفیسر نقیب اللہ رازی نے بھی موضوع پر قرآن وحدیث کی تعلیمات کی مدد سے روشنی ڈالی۔Image may contain: 4 people, people sitting

Facebook Comments

متعلقہ مواد

Back to top button