50

چین کا خلائی اسٹیشن بے قابو، کس تاریخ کو زمین سے ٹکرانے والا ہے؟دنیا کی بڑی آبادی خطرے کی زد میں آگئی

 اسلام آباد(آوازچترال .مانیٹرنگ ڈیسک)چین کا خلائی ستیشن تیانگونگ قابو سے باہر ہو گیا، تیزی سے زمین کی سمت بڑھ رہا ہے، آئندہ چند دنوں میں کسی بھی وقت زمین پر گر جائے گا، 30مارچ سے 2اپریل کے درمیان زمین پر کس ملک میں گرے گا، ماہرین کا تجزیہ جاری، دنیا کی بڑی آبادی کو خطرات لاحق ہو گئے۔ تفصیلات کے مطابق چین کا پہلا خلائی ستیشن تیاگونگ قابو سے باہر ہو گیااور تیزی سے زمین کی سمت بڑھ رہا ہے اور ماہرین کے مطابق 30مارچ سے 2اپریل کے درمیان کسی بھی وقت زمین پر گر سکتا ہے، تیا نگونگ خلائی اسٹیشن 9.4 ٹن وزنی ہے جب کہ اس کی لمبائی 34 فٹ اور چوڑائی 11 فٹ ہے۔ اسے تقریباً دو سال تک خلاء میں رہتے ہوئے زمین کے گرد چکر لگانے کےلیے بنایا گیا تھا۔مارچ 2016 میں چینی سائنس دانوں نے اعلان کیا کہ تنانگونگ نے ڈیٹا بھیجنا بند کردیا ہے جس کے بعد خلائی اسٹیشن زمین پر موجود ماہرین کے کنٹرول سے باہر ہوگیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ خلائی اسٹیشن بے قابو ہوکر زمین پر واپس گرجائے گا۔یورپی خلائی ایجنسی سے وابستہ سائنس دانوں کے مطابق، تیانگونگ کے مدار کی حاصل کردہ معلومات مدنظر رکھتے ہوئے کہا جاسکتا ہے کہ یہ خلائی اسٹیشن 30 مارچ سے 2 اپریل کے درمیان کسی بھی وقت زمین پر گرسکتا ہے۔ لیکن یہ کہاں گرے گا؟ اس بارے میں بہت بے یقینی ہے۔ اب تک لگائے گئے حساب کتاب کے مطابق، تیانگونگ 1 خطِ استوا سے 43 درجے جنوب سے لے کر 43 درجے شمال تک، کسی بھی جگہ گر سکتا ہے۔ یہ علاقہ وسطی چین سے لے کر آسٹریلیا کے انتہائی جنوبی سرے تک کے درمیان پھیلا ہوا ہے۔ تشویشناک یہ ہے کہ دنیا کی بڑی آبادی ان ہی علاقوں میں آباد ہے۔سائنس دانوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ خلائی اسٹیشن کا بڑا حصہ زمینی فضا میں واپس داخل ہوتے وقت یعنی اپنی ’’ری اینٹری‘‘کے دوران، زمینی فضا سے زبردست رگڑ کے باعث جل کر راکھ ہوجائے گا اور بیرونی کرہ ہوائی میں بکھر جائے گا۔ لیکن پھر بھی خلائی اسٹیشن کے کچھ سخت اور مضبوط حصے زمین تک ضرور پہنچ سکتے ہیں۔

Facebook Comments