59

دینی مدارس اسلام کے مورچے ہیں جماعت اسلامی کے موجودگی میں خیبرپختونخوا میں دینی مدارس کے خلاف کسی قسم کی قانون سازی نہیں کی جاسکتی ۔ عنایت اللہ خان

پشاور(آوازنیوز )سینئر صوبائی وزیر برائے بلدیات و دیہی ترقی خیبرپختونخوا و پارلیمانی لیڈر جماعت اسلامی عنایت اللہ خان نے کہا ہے کہ دینی مدارس اسلام کے مورچے ہیں اور مدارس قرآن وسنت کی روشنی پھیلانے اور امن وسلامتی کے مراکز ہیں۔دینی مدارس سے تربیت یافتہ افراد نے ہمیشہ ملک وقوم کی خدمت کی ہے۔جب کبھی بھی ملک وقوم پر کڑاوقت آیا علماء کرام اور بلاامتیاز تمام مدارس اور ان میں پڑھنے والے لاکھوں طالب علموں نے محب وطن اور محب اسلام ہونے کاثبوت دیا ہے۔جماعت اسلامی کی موجودگی میں خیبر پختونخوا میں دینی مدارس کے خلاف کسی قسم کی قانون سازی نہیں کی جا سکتی۔انھوں نے کہا کہ کچھ عناصر غلط فہمیاں پیدا کرنے اور اپنے مخصوص قسم کے مفادات کے لیے بے بنیاد قسم کا پرواپیگنڈا کر رہے ہیں کہ صوبہ میں مدارس کے خلاف اصلاحات کے نام پر قانون سازی ہو رہی ہے۔انھوں نے کہا کہ جماعت اسلامی دینی مدارس کو اسلام کے قلعے سمجھتی ہے اور ہمارا خود بھی مدارس کا بہت بڑا نیٹ ورک ہے۔جماعت اسلامی میں علماء کی بہت بڑی تعداد شامل ہے اور حال ہی میں کثیر تعداد میں علما ء جماعت میں شمولیت کا اعلان کر چکے ہیں جبکہ مزید چند دنوں میں شمولیت کا اعلان کریں گے۔انھوں نے کہا کہ ہماری خواہش ہے کہ حکومت دینی مدارس کی سرپرستی کرے اور ان کی ہر طرح کی مدد کرے تاکہ ان کو مستحکم بنایا جاسکے۔کچھ عناصر کو صوبائی حکومت بالخصوص جماعت اسلامی کی یہ کاوشیں اورکا میابیاں ہضم نہیں ہو رہی ہیں اور اس طرح کی بے بنیاد افواہیں پھیلا رہے ہیں لیکن ان کو ناکامی کا منہ دیکھنا پڑے گا۔انھوں نے کہا جماعت اسلامی کی اپنی علما اور مدارس کی تنظیمات ہیں اور ان کی رہنمائی میں ہم صوبائی حکومت میں بھرپور نمائندگی اور ترجمانی کر رہے ہیں۔

Facebook Comments

اپنا تبصرہ بھیجیں